retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
Stacks Image 249
retina
Stacks Image 304
retina
Stacks Image 306
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
retina
Stacks Image 478
retina
retina

Monthly Archive: August 2020

Steel town- Jamshedpur. Grandpa and me. Podcast serial by Valueversity. Episode 38

Narration by: Shariq Ali
August 27, 2020
retina

A brief travelogue about the steel town named after the father of industrial revolution in India

 

 

The driver stopped the vehicle near the small temple and said. Before starting the journey, please pray if you wish. A three-foot-high mud-brick wall all around and a dome standing on four pillars in the middle. Decorated with colourful designs. The saffron flag waving at the top. Under the dome, few passengers busy praying. And the priest keeping an eye on the offerings and cash box. When the driver returned from the puja, we left after putting some money as offering in the box. Uncle was in a storytelling mood and recounting his trip to India. He said. Departing from Delhi, the destination was Jamshedpur. My host had arranged to travel to Ranchi by plane and the rest by car. Ranchi Airport seemed a bit mediocre. Outside, a local car and driver was waiting for us. When we left the airport, a policeman stopped us. Dozens of armed guards first ran around the VIP’s moving vehicle. Then they rode in front and back jeeps and the traffic opened. This temple was at the beginning of Jamshedpur Road. By dividing Bihar in eastern India, Jharkhand’s state came into being in the year 2000. Ranchi and Jamshedpur are the two major cities here. Along the way, we found gentle hills full of bushes and trees. But most of the time the roads were going across the arid landscape. Lorry and vehicles of Tata Mills remained visible here and there along the way. When we reached Jamshedpur, it was a delightful sight. A clean industrial city with a population of eight lakhs. Yani Apa asked. The steel town named after Jamshitji Nisruvanji? I spoke before Uncle. And where Bollywood’s Priyanka Chopra was born. Yani Apa’s eyes sparkled. Uncle said. Correct. When we reached Jamshedpur, it was getting late. Hundreds of workers in Tata Mill uniforms were returning home on bicycles. Yellow helmet on the head and lunch tiffin tied at the back seat of the bike. Along the way, I saw many lush green parks. The hotel was in the city centre and very comfortable. The conference room was also nearby. Everyone was speaking the same language. You can call it Urdu or Hindi. Eighty-five per cent of the population in the city is literate. Tata is ruling everywhere. Tata Steel, Tata Motor, Tata Power etc. This flourishing is no doubt a success pride for the Tata family. Tell me more about Jamshtaji? I asked. He replied. The founder of the Tata group and family was born into a Parsi family in 1839. He lived up to 65 years. It would be correct to call him the founder of the industrial revolution in India. Then we visited Tata Steel mill. A team welcomed us with flowers. They first showed us a short documentary film and gave a brief introductory speech. Then wearing protective clothing and goggles, we went inside the factory. From the safe distance of a high balcony, we saw relays of fiery iron coming from the furnace. Cooling down, rolling and splitting into sheets. Yani Apa said. Remember Mamdu. Time is also like molten steel. If one can timely mould it into right decisions, it is so useful. Otherwise, a river of destructive fire… To be continued.
|     |

کہانی کا فراڈ ، ابتدا سے آج کل ، انشے سیریل ، بارہواں انشا ، شارق علی ، ویلیوورسٹی. Fictional fraud, GENESIS, PODCAST SERIAL EPISODE 12.

Narration by: Shariq Ali
August 18, 2020
retina

To organise a large group of people to cooperate, we need a believable narrative. It does not matter whether it is true or false. Fictional fraud has been used in human history repeatedly and is still in use.

 

 

مصروف سڑک کے کنارے فٹ پاتھ تھا اور سر سبز باغ سے اسے جدا کرتا تازہ پینٹ کیا ہوا لوہے کا سیاہ جنگلا بھی . یہ سلسلہ کئی فرلانگ تک چلتا چلا گیا تھا . ایک حصے میں سایکل سٹینڈ کا انتظام موجود تھا.  ہم  نے سائیکلیں سٹینڈ پر کھڑی کر کے تالے لگاے.  پھر دھیمے  قدموں سے باتیں کرتے ہوے سبزہ زار کے بیچ بنی پیدل رہگزر پر چلنے لگے۔ زن  نے پروف سے پوچھا . ابتدائی سماج کے خد و خال کیونکر ابھرے ؟ کہنے لگے .  پہلے زرعی انقلاب کے نتیجے میں غذا کی فراوانی نے انسانی تہذیب کا آغاز کیا جس نے دور رس نتائج مرتب کیے. اگرچہ انفرادی سطح پر بیشتر لوگوں کے لئے زندگی زیادہ مشکل ہو گئی. ایک دفعہ بستیاں بسا لینے کے بعد وہ آسائش اور سہولت کے قیدی بن کر رہ گئے.  جب کہ جنگل کی خانہ بدوش زندگی میں وہ نسبتاً زیادہ آزاد تھے. شاید زیادہ خوش بھی . لیکن بلا شبہ انسانی زندگی اب زیادہ محفوظ تھی.  آبادی میں اضافہ ہوا تو سیاسی تنظیم ایک ضرورت بن گئی.  سماج کے دھڑیے واضح ہونے لگے اور ان میں اختیارات کی تقسیم ابھر کر سامنے آئی. زیادہ بڑے انسانی جتھوں کا آپس میں تعاون ضروری ہو گیا تاکہ بڑھتی ہوئی اجتماعی سماجی ضروریات کو پورا کیا جا سکے. گفتگو میں کچھ وقفہ آیا تو میں کن انکھیوں سے زن اور اس روشن دن اور ارد گرد کے حسین منظر کا موازنہ کرنے لگا . لیکن یوں کے کسی کو کانوں کان خبر نہ ہو .  ہمارے دائیں طرف اونچے درختوں کا سلسلہ تھا اور ان کے پیچھے دریائے کیم جو کنگز کالج کی عمارت کے ساتھ بہ رہا تھا۔ بلند درختوں کی موجودگی کے باوجود ہم کنگز کالج کے کتھیڈرل کے عالمی شہرت یافتہ دروازے کو دیکھ سکتے تھے ۔ اسے کیمبرج شہر کی عمارتی علامت کہا جاے تو غلط نہ ہو گا۔ پندرھویں صدی میں اس کتھیڈرل کی تعمیر ھنری دی ایٹتھ کے زمانے میں مکمل ھوی تھی ۔ گوتھک طرز کی کھڑکیوں میں رنگین شیشوں پر بنی فنکارانہ شبیہیں دیکھنے سے تعلق رکھتی ہیں۔ ہمارے دائیں بائیں سے گزرتے ہنستے مسکراتے طالب علموں اور سیاحوں کے غول تھے.  ہم دائیں ہاتھ مڑ کر لکڑی کے ایک چھوٹے سے پل پر سے گزرے جو بمشکل ستر اسی فٹ چوڑا ہوگا۔ لیکن چھوٹے سے دریائے کیم کو عبور کرنے کے لیے بہت کافی۔ زن نے ساتھ لاے بیگ سے بطخوں کے لئے فیڈ نکالی . ہم نے پل پر کھڑے ہو کر سامنے  دیکھا تو کنگز کالج کی عمارت اور اس کے کیتھڈرل کا پورا منظر اب ھماری آنکھوں کے سامنے تھا۔ دریائے کیم میں پنٹنگ یعنی یہاں کی روایتی کشتی رانی  جاری تھی۔ جیک نے بات آگے بڑھائی . تو پھر بڑے پیمانے پر اجتماعی تعاون کیونکر ممکن ہوا ؟ پروف بولے . یاد رکھو بڑے پیمانے پر انسانی تعاون مشترکہ بیانیے ہی کی مدد سے ممکن ہوتا ہے  ۔ اس ضرورت کے ما تحت روایتی قصے اور لوک کہانیاں ایجاد ھویں جو دھیرے دھیرے مزہب کی صورت اختیار کر گئیں۔ یہ سارے مشترکہ بیانیے سچ پر مبنی نہیں تھے اور نہ ہی ان کا سچا ہونا ضروری اور اہم تھا۔   ان پر اجتماعی اعتقاد باہمی  تعاون کے لیے ضروری اور اہم تھا۔ کسی دیوتا کو سچ ماننے والے مل جل کر ایک دوسرے کی مدد سے عظیم عبادتگاہ تعمیر کر سکتے تھے۔ جب کہ دیوتا کا سچ یا حقیقت ھونا کوی اہمیت نہیں رکھتا تھا.  یہ بھی ایک کڑوا سچ ہے کہ باہمی تعاون ہمیشہ ہنسی خوشی نہیں ہوتا تھا.  بلکہ بعض اوقات اس میں گھڑی ھوی جھوٹی کہانیوں کا فراڈ یا بزور طاقت کمزوروں کا زبردستی تعاون حاصل کر لینا شامل تھا.  حکمران طبقہ جس میں مذہبی رہنما بھی شامل تھے عوام کا اجتماعی تعاون حاصل کرنے کے لیے تشدد اور جھوٹے مزہبی قصے کہانیوں کا بے دریغ استعمال کرتے تھے. زن بطخوں کو فیڈ کر چکی تو ہم نے پل عبور کیا اور کیمبرج شہر کی مرکزی گلیوں میں داخل ہو گئے .  تیرھویں صدی سے دریاے کیم کے کنارے آباد یہ ہنستا بستا شہر اپنے تعلیمی اداروں کی وجہ  سے عالمی شہرت رکھتا ہے۔ یہاں تراشے ہوے پتھروں کی تنگ گلیاں ہیں جس کے دونوں طرف صدیوں پرانی تاریخی عمارتیں کھڑی ہیں۔ پیدل چلتے یا سایکل سوار نوجوان طالب علموں کی  ادھر سے ادھر جاتی رنگین اور پر جوش لہریں ہیں اور کہیں کہیں عالمانہ لباس پہنے ایک درسگاہ سے دوسری درسگاہ جاتے معتدل استادوں کی آہستہ خرامی اور بازاروں میں کسی عام شہر جیسی مصروفیت بھی…. جاری ہے
|     |

Dreams never die — Harper’s Ferry. Grandpa and me. Podcast serial by Valueversity. Episode 37

Narration by: Shariq Ali
August 14, 2020
retina

John Brown was the brave and conscientious character in American history who ignited the anti-racist movement

 

The bell tinkled every time salesgirl closed the cash counter. Showcase on the side was exhibiting delicious coffee accessories. Picture menu on the back wall was full of colours. Alluring floral hat and very charming but business-like smile asked. What can I do for you? Uncle Patel was recounting his recent trip to America. Everyone was giving him full attention. He continued. After ordering, we went down the stairs and sat in the elegant restaurant in the basement. Harper’s Ferry is a small town in West Virginia. Located at the confluence of the Potomac and Shenandoah rivers. There is a historic garden in the green floodplain by the river and a steep road goes up the hill from this garden. On one side, was a row of small houses, a combination of beauty and sophistication. On the other, a series of small shops and this cute little restaurant. We decided to sit there for coffee. The host had said while walking along the river some time ago. Listen! The waves are whispering the name of our hero. John Brown. Who is he? I asked. Uncle replied. A conscientious and brave white man. In 1859, one and a half years before the American Civil War, he struggled against black slavery. He considered it a heinous crime against humanity. First, he fought without violence for this cause for many years. Disappointed, he planned a practical coup by arming the oppressed slaves. The first step was to seize Harper’s Ferry arsenal loaded with thousands of weapons. He thought that if the slaves got weapons, they would be able to fight their war. There were four million slaves in the south in those days. He believed that once the fire of freedom ignited, the whole of America would be free from this curse. Brown had 21 companions, including his three sons, sixteen whites and five blacks. They succeeded in capturing the arsenal in a night. They thought local slaves will come to their aid. But it never happened. Brown and his associates were then surrounded by government militias and local racists. When the encounter happened, they killed two of his sons and several comrades. John, along with one of his sons and a few companions, positioned himself in an engine room. The besieged commander advised them to surrender. On his refusal, there was a fierce attack. They caught him alive but wounded. After a trial, they hanged him along with his five accomplices, including his son. Then the story spread throughout America. He and his comrades became the first martyr and hero of this struggle. Their dream became the wake-up call for all consciences. Only six years later, as a result of the American Civil War, American slaves were liberated… To be continued
|     |

Streets of Edinburgh. Grandpa and me. Podcast serial by Valueversity. Episode 36.

Narration by: Shariq Ali
August 11, 2020
retina

Enjoy the story of the beautiful and history rich city of Scotland and its majestic castle

 

 

The old man was busy playing the bagpipes. He was wearing a green kilt (Scottish traditional men’s skirt). Yani Apa was recounting the Edinburgh Youth Festival. She said. Enjoying deep clouds and the pouring rain all the way, we reached The Royal Mile. The soothing melody of the bagpiper enchanted us. The Royal Mile is a one-mile-long chain of streets in the old part of the city. On both sides are hundreds of years old majestic buildings of historical importance. Many monuments and statues here and there. A rocky brick road passes between ending at the fort. We made a video of the old bag Piper. Praised him with few words. Put pound coins into his box and moved on. On our way to the castle, the host told us the horrible story of Maggie Dickson. For murdering a child, she received the punishment by hanging in this square. The doctor pronounced her dead after execution. The body was being taken to the cemetery on a horse-drawn carriage when she got up alive. The entire square became deserted in an instant. Twice the death penalty for a crime is not possible. Thus, she survived. Then the story of a murderer named Burke who killed sixteen innocent people. And sold their bodies for dissection at a medical school for some money. He was finally arrested and sentenced. We then reached the castle and saw the city from its height. On one side were the modern shopping centres on Princess Street. Opposite to this were ancient buildings with hundreds of years of history. Norman rulers built the castle on several thousand years old volcanic rocks. It is one hundred and twenty meters high. It started in the 12th century and took five hundred years to complete. The main entrance is on the east side. The castle has a natural landing and a dug trench on the remaining three sides. Because of this, it could have been very difficult to attack. Bailey is the lower and wider part of the castle. Where ordinary soldiers and servants lived. And there were residences, mess and weapons warehouses. Keep is the most important and highest part. Ruler used to live there. During the Anglo-Scottish Wars in the twelfth to fourteenth centuries. Each side lost and conquered it on various occasions. Then it became an arsenal in the fifteenth century. And a prison in World War I. I interrupted and asked. What did you learn from this international fair? I saw colleagues of different colours, races, religions and societies working together. Living despite differences of opinion. And it gave me a firm belief that any ideology, social norm or religion cannot be true. If it denies this universal human equality, love and harmony. This diversity in life is the will and perfection of the Creator… To be continued

 

|     |

بقا اور خوشی ، ابتدا سے آج کل ، انشے سیریل ، گیارہواں انشا ، شارق علی ، ویلیوورسٹی. SURVIVAL AND BLISS, GENESIS, PODCAST SERIAL EPISODE 11

Narration by: Shariq Ali
August 4, 2020
retina

The transition of humans from nomadic hunting gathered lifestyle to settled sedentary agricultural life surely improved the survival of human society. Did it result in achieving happiness at an individual level?  

 

 

میڈنگلے ہال سے کیمبرج میں واقع ہمارے یونیورسٹی کیمپس کا فاصلہ تقریبآ چار میل ہے۔ اچھے موسم میں سائیکلوں پر کوی آدھے گھنٹے کی مسافت۔ لیکن آج کلاس میں پہونچے کی جلدی نہ تھی.  چھٹی کے دن پروف کو کیمپس کی سیر کرانا مقصود تھا ۔ ھم سڑک کے دونوں جانب قطار سے لگے بلند درختوں اور اونچے نیچے سرسبز و شاداب کھیتوں اور ان کے کنارے بھولوں سے لدی جھاڑیوں سے لطف اندوز ہوتے ہوئے دھیرے دھیرے پیڈل چلا رہے تھے۔ سب سے آگے جیک پھر پروف. ان کے پیچھے جینز اور خوشرنگ جیکٹ اور میرون ہیلمٹ پہنے زن اور آخر میں زن کی اس خوش ذوقی کو دل ہی دل میں سراہتا لیکن اس کی توجہ سے بچتا ہوا میں۔ رات بھر کی بارش کے بعد صبح کی نرم دھوپ میں یہ سب کچھ کسی اور ہی دنیا کا منظر معلوم ہوتا تھا. میں بے حد خوش تھا . الگ سائیکل ٹریک نہ ہونے کی وجہ سے ہم سب کو بہت احتیاط سے سڑک کے بائیں جانب آگے پیچھے چلنا پڑ رہا تھا۔  آدھے راستے سے کچھ تھوڑا ہی آگے گئے ہوں گے تو ایک چھوٹے سے خوش نما پارک میں کھلے پھولوں پر نظر پڑی۔ پروف نے ھاتھ کے اشارے سے  کچھ دیر یہاں رکنے کا ارادہ ظاہر کیا . ھم سایکلیں قریب کے درخت کے نیچے کھڑی کر کے جنگ عظیم کے شہیدوں کی سنگی یادگار کے سامنے کھلے سرخ گلابوں کا رخ کیے بنچ پر بیٹھ گئے۔ زن نے پروف سے پوچھا . شعوری انقلاب کے بعد انسانی تاریخ میں کون سی بڑی تبدیلی آئ ؟ کہنے لگے . آج سے تقریبا دس سے بارہ ہزار سال پہلے دنیا کے مختلف خطوں میں مختلف اوقات میں اس وقت کے انسانوں کی زندگی  میں ایک عظیم انقلاب برپا ہوا۔ یہ تھا پہلا زرعی انقلاب. اس انقلاب نے اس دور کے انسانوں کے رہن سہن اور ان کے سماج میں بنیادی اور دوررس تبدیلیاں پیدا کیں۔ ہم دو ہزار سال پر محیط نسبتاً آہستگی سے انیوالی تبدیلی کو انقلاب اس لیے کہتے ہیں کیونکہ اس نے انسانی سماجی ارتقا میں بے حد اہم پیش رفت کی تھی . انسانی گروہوں نے خانہ بدوشی اور جنگلوں اور غاروں میں رہنا چھوڑ کر اور شکار اور پھلوں کی غذا پر بنیادی انحصار ختم کر کے دریاؤں کے کنارے آباد ہونا اور فصلیں اگانا اور جانوروں کو پالنا شروع کردیا. یہ بنیادی سماجی ڈھانچے اور ٹیکنالوجی کے آغاز کے حوالے سے بے حد عظیم تبدیلی تھی. مستقل رہائش کے لئے گاؤں بسے تو زمین اور فصل کی ملکیت کا سوال اٹھا . یوں تحریر کا آغاز ہوا. ماحول کی تبدیلی اور مستقل رہائش گاہوں میں لوگ اور گوداموں میں غذا کی فراوانی محفوظ ہوئی تو ابادی میں تیزی سے اضافہ ہوا.  سبزیوں اور ایک جیسی غذا یعنی اجناس کا زیادہ استعمال شروع ہوا. اگلے سال قحط کی فکر نے اضافی غذا کو محفوظ کرنے کے انتظامات شروع کیے۔  پھر تو وہ سب لوگ جنگل کی خانہ بدوش زندگی سے جان چھڑ ا کر بے حد خوش ہوے ہوں گے؟ میں نے بات بڑھائی . کہنے لگے .  ارتقا بدلتی صورت حال میں بقا سے جڑی جد و جہد کا نام ہے.  جبکے خوشی کا تعلق انسانی شعور سے ہے . خوشی تب ہی میسر ہوتی ہے جب انصاف مہیا ہو . ہوا یوں کہ جس زر خیز زمین پر وہ فصلیں اگاتے تھے  ان پر دوسرے انسانی گروہوں کے قبضے کے ممکنہ خطرے سے حفاظت کے لئے جنگجو جتھے قائم ہوے . ان کا سردار حکمران بن گیا. آسمانی بلاؤں اور آفتوں سے بچاؤ  اور اچھی فصلوں کی امید دلانے کے لئے مذہبی عالم وجود میں اے.  اگرچے محنت میں حکمران اور مذہبی عالم شامل نہ تھے لیکن ان کسانوں کو اپنی محنت کا بیشتر حصہ ان لوگوں کو دینا پڑتا تھا . یہ اقلیتی طبقہ محنت میں تو شریک نہ تھا  لیکن طاقت کے بل بوتے پر زیادہ حصّے کا حقدار ٹہرتا تھا ، یہ ساری صورت حال سماج کے ارتقا کے  لئے تو بے حد فائدہ مند ثابت ہوئی.  لیکن انفرادی زندگی کے لحاظ سے وہ لوگ جو فصلیں اگاتے تھے اور جن کی محنت کے نتیجے میں یہ ساری خوشحالی میسّر تھی اقلیتی حکمران طبقے کے مقابلے میں بیشتر صورتوں میں بد حال اور نا خوش ہی رہے. ان دہقانوں کو غذا حاصل کرنے کے لئے خانہ بدوشی کے دنوں کے مقابلے میں اب زیادہ اور طویل مدتی محنت کرنا پڑتی تھی. جبکے وہ جنگلوں میں نسبتاً آسانی سے اپنی غذا جو زیادہ متنوع ھوتی تھی حاصل کر لیا کرتے تھے.  ابتدائی دور کے ان دہقانوں کو ایک سا مہیا اناج زیادہ مقدار میں کھا کر اور نسبتاً تنگ اور غیر صحتمند رہائش گاؤں میں زندگی گزارنے کے سبب زیادہ بیماریوں کا سامنا رہتا تھا.  اگرچہ اس بات میں کوئی شک نہ تھا  کے اب ان کے پاس غذا کی فراوانی تھی اور ان کی بقاء اب زیادہ مستحکم تھی…. جاری ہے
|     |
retina

FOLLOW

retina   retina   retina   retina
retina   retina   retina

SUBSCRIBE

enter your e-mail address here

  FEED

retinaINSTAGRAM

AUDIOBOO

VISITOR STAT

14,866 unique visits to date
©Valueversity, 2011-2014. All rights reserved.

Powered by Wordpress site by Panda's Eyes

retina
Stacks Image 218
retina
Stacks Image 222
retina
Stacks Image 226
retina
Stacks Image 230
retina
Stacks Image 234
retina
Stacks Image 238
retina